وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ مسلم لیگ (ن) کے قائد نواز شریف کو پاکستان چھوڑنے کی اجازت دینا ’’بڑی غلطی‘‘ تھی۔

وہ جمعہ کو منڈی بہاؤالدین میں جلسہ عام سے خطاب کر رہے تھے۔

حزب اختلاف کی جماعتوں نے تحریک عدم اعتماد کے لیے حمایت حاصل کرنے کے لیے پی ٹی آئی کے اتحادیوں سے رابطے شروع کیے جانے کے بعد حکمران جماعت نے پارٹی کو نچلی سطح پر متحرک کرنے کے لیے بڑے پیمانے پر مہم چلانے کا اعلان کیا تھا۔

عمران خان نے کہا کہ اپوزیشن جانتی ہے کہ پختونخوا میں کیا ہوا جب پی ٹی آئی نے پانچ سال کی مدت پوری کی اور دوبارہ منتخب ہوئی۔

انہوں نے پی ٹی آئی کی جیت کو صوبے میں غربت میں کمی سے جوڑا۔

مسلم لیگ ن کے صدر شہباز شریف پر تنقید کرتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ چھوٹے میاں کا دل بہت کمزور ہے۔ شہباز شریف جانتے ہیں کہ اگر ان کا کیس اٹھایا گیا تو انہیں نہیں بخشا جائے گا۔ وہ عدالت سے کیوں بھاگ رہے ہیں؟ آج عدالتیں آزاد ہیں۔

وزیراعظم نے نواز شریف، آصف علی زرداری اور مولانا فضل الرحمان سمیت تمام اپوزیشن لیڈروں کو ’’لٹیرے اور ڈاکو‘‘ قرار دیا۔

انہوں نے مولانا فضل الرحمان کے لیے ’ڈیزل‘ کا محاورہ استعمال کیا اور کہا کہ ’ہر تین ماہ بعد ڈیزل پی ٹی آئی کی حکومت گرانے کے لیے تمام اپوزیشن کو اکٹھا کر لیتا ہے، لیکن 30 سال بعد قومی اسمبلی بغیر ڈیزل کے سولر پر چل رہی ہے، لہٰذا یہ بن گیا ہے۔ اس کے لیے مشکل اور اب وہ 12ویں کھلاڑی بن گئے ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.

%d bloggers like this: