سندھ حکومت نے 108 بچت بازار لگائے، 462 ملین روپے کی سبسڈی دی، وزیراعلیٰ مراد علی شاہ

وزیراعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ نے کہا ہے کہ ان کی حکومت آٹا، چینی اور گھی جیسی اشیائے ضروریہ پر 462 ملین روپے کی سبسڈی دے رہی ہے جس کے لیے صوبے کے پانچوں ڈویژنوں میں 108 بچت بازار قائم کیے گئے ہیں۔

“یہ سبسڈی رمضان کے مقدس مہینے کے آخر تک جاری رہے گی اور اس کے ساتھ ہی حکومت مارکیٹ میں قیمتوں کو مستحکم کرنے کے لیے ٹھوس اقدامات کر رہی ہے۔”

یہ بات مراد علی شاہ نے پیر کو یہاں وزیراعلیٰ ہاؤس میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔ ان کے ساتھ ان کی کابینہ کے ارکان سعید غنی، شرجیل انعام میمن اور مرتضیٰ وہاب بھی موجود تھے۔

وزیراعلیٰ مراد علی شاہ نے انکشاف کیا کہ ان کی حکومت نے صوبے کے پانچوں ڈویژنوں میں 108بچت بازار قائم کیے ہیں، جن میں کراچی میں 34، حیدرآباد میں 19، میرپورخاص میں 10، لاڑکانہ میں 17، شہید بینظیر آباد کے 19 اور سکھر کے 19 بازار شامل ہیں۔ انہوں نے کہا کہ صوبے بھر میں قائم تمام 108 بچت بازاروں میں 400 روپے فی 10 کلو گرام آٹا فروخت کیا جا رہا ہے جبکہ مارکیٹ کی قیمت 800 روپے فی 10 کلو گرام ہے۔ بچت بازاروں میں سبسڈی والے نرخوں پر۔

چینی اور گھی کے بارے میں بات کرتے ہوئے وزیراعلیٰ نے کہا کہ منتخب بچت بازاروں میں چینی 10 روپے میں فراہم کی جا رہی ہے۔ 85 سے 90 روپے فی کلو گرام کی مارکیٹ قیمت کے مقابلے میں 70-75/KG۔ اسی طرح گھی 410 روپے فی کلو فروخت ہو رہا ہے جب کہ اس کی مارکیٹ قیمت روپے ہے۔ 450/KG

%d bloggers like this: